نعت رسول: ان کے بحر کرم سے ہے سیراب دل

الدال علیٰ خیر کفاعلہ (شیئر کریں)

نتیجۀ فکر : سید اولاد رسول قدسی مصباحی، نیو یارک امریکہ

ان کے بحر کرم سے ھے سیراب دل
جانے کیوں پھر بھی رہتا ھے بے تاب دل

ان کی یادوں میں ہر دم دھڑکتا ھے جو
ایسا دل دہر میں اب ھے نایاب دل

بات اظہار و اقرار کی بعد میں
پہلے سیکھے محبت کے آداب دل

شرط ھے ان پہ سرشار و قربان ہو
ورنہ دیکھا کریگا فقط خواب دل

ان کی قربت کے اسباق پڑھ کر بنا
خوش نصیبی کا بے حد حسیں باب دل

حق سے ہو جاؤ مربوط گر چاہیۓ
بحر خوشنودئ رب میں غرقاب دل

جس کے دل میں ہیں آقا سکونت پزیر
اہل دل ھے وہ رکھتا ھے شاداب دل

ان کے دامن کی تقدیس کے نور سے
بن گیا فضل و رحمت کی محراب دل

کیف و غم ، درد و فرحت ، سکوں اضطراب
ایسا رکھتا ھے گرد اپنے احباب دل

خوش ھے ان کی غلامی کے گلزار میں
کیا کریگا لۓ اونچے القاب دل

ان کے در پر لٹاتا ھے سجدے عجب
” قدسی ” چرخ عقیدت کا مہتاب دل

الدال علیٰ خیر کفاعلہ (شیئر کریں)

About ہماری آواز

ہماری آواز ایک غیر جانب دار نیوز ویب سائٹ ہے جس پر آپ سچی خبروں کے ساتھ ساتھ مذہبی، ملی،قومی، سیاسی، سماجی، ادبی، فکری و اصلاحی مضامین اور شعر وشاعری پڑھ سکتے ہیں۔ یہی نہیں آپ خود بھی ہمیں اپنے پاس پڑوس کی خبریں اور مضامین وغیرہ بھیج سکتے ہیں۔

Check Also

یوم خواتین پر کچھ اشعار

ازقلم: سرفراز بزمی ہے موت زمانے کے لئے مرگ امومتاس راز سے واقف نہیں افرنگ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔