بلاگر کے قتل کی سازش پر پاکستان کی خاموشی

الدال علیٰ خیر کفاعلہ (شیئر کریں)

انسانی حقوق کے حوالے سے اس کے موقف پر سوالات اٹھاتی ہے۔ میڈیا رپورٹ

اسلام آباد۔ 25 جنوری۔ ایم  این  این۔
ہالینڈ میں مقیم بلاگر اور ایکٹوسٹ احمد وقاص گورایہ کے قتل کی سازش کے الزام میں برطانوی نژاد پاکستانی شخص محمد گوہر خان کے کیس میں برطانیہ کی عدالت میں کیے گئے انکشافات پر پاکستان کی خاموشی  نے انسانی حقوق اور آزادی اظہار پر ملک کے موقف پر سنگین سوالات اٹھائے ہیں۔جیو ٹی وی کے مطابق، خان نے عدالتی کاغذات میں مزمل/مدز/پاپا/مش کے نام سے بیان کیے گئے نامعلوم افراد یا ہینڈلرز کے ساتھ ایک معاہدہ کیا ۔   اس  نے گورایا کو قتل کرنے کے لیے نیدرلینڈ کا سفر کیا۔ یہ مڈل مین، بینک اکاؤنٹ، اور رقم کی منتقلی کی رسید بلاگر کے قتل کی سازش میں پاک روابط کی نشاندہی کرتی ہے تاہم پاکستان میں حکام نے اس معاملے میں ایک لفظ بھی نہ کہنے کا انتخاب کیا ہے۔ آصف، ایک اور شخص جس نے خان کی مدد کی، خان سے رقم پاکستانی روپے میں پاکستان میں اس کے بینک اکاؤنٹ میں منتقل کرنے کے لیے کہا۔ انہوں نے 220 روپے کی کرنسی کی شرح پاؤنڈ پر اتفاق کیا جو 1.1 ملین روپے بنتا ہے۔ اخبار نے رپورٹ کیا کہ یہ ضروری ہے کہ حکومت یہ ظاہر کرے کہ وہ کسی بھی خلاف ورزی کرنے والوں کے خلاف قانونی کارروائی کرکے آزادی اظہار اور انسانی حقوق کی قدر کرتی ہے۔ یہ واضح نہیں ہے کہ آیا اسلام آباد نے اس مشتبہ شخص کے بارے میں لندن سے رابطہ کیا ہے یا درمیانی اور اس کے باس کی شناخت کے لیے کوششیں کی جا رہی ہیں۔اخبار نے پوچھا کہ  ایم کیو ایم کے سینئر رہنما ڈاکٹر عمران فاروق کو 2010 میں لندن میں ان کے گھر کے باہر قتل کیا گیا تھا اور اس وقت بھی برطانیہ اور پاکستان نے ایک دوسرے کی قانونی مدد کی تھی لیکن سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ کیا مبینہ مجرموں کو پکڑنے کے لیے اس طرح کا طریقہ کار استعمال کیا جا رہا ہے؟  عمران فاروق قتل کیس میں بھی ایم ایل ایز کو استعمال کیا گیا ہے۔ شک یہ ہے کہ بلاگر کے قتل کی سازش کیس میں ڈچ اور برطانیہ کے حکام کی جانب سے شدید تشویش ظاہر کرنے کے بعد بھی پاکستان نے کوئی قدم کیوں نہیں اٹھایا۔

الدال علیٰ خیر کفاعلہ (شیئر کریں)

About محمد شعیب رضا نظامی فیضی

عالمی شہرت یافتہ ویب پورٹل ہماری آواز کے بانی و ڈائریکٹر گورکھ پور(یو۔پی۔) کے قدیم ترین قصبہ گولابازار سے تعلق رکھنے والے جناب مولانا محمد شعیب رضا صاحب ہیں۔ جواں سال قلم کار اور درجن بھر کتابوں کے مصنف و مؤلف ہونے کے ساتھ ساتھ موصوف ایک کامیاب ویب ڈیزائنر بھی ہیں۔ ہماری آواز

Check Also

آہ! ترکی کے معروف عالم ربانی الشیخ محمود آفندی نقشبندی بھی داعی اجل کو لبیک کہہ گئے

سوگوار قلم: سید صابر حسین شاہ بخاری قادریبسم اللہ الرحمن الرحیم ، نحمدہ ونصلی ونسلم …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔