یوپی

عرس طیبی واحدی میں معارف طاہر ملت کا رسم اجراء ہوا

پریس ریلیز/ بلگرام شریف

بلگرام شریف ضلع ہردوئی اترپردیش میں حضرت مجدد وقت سید میر عبدالواحد بلگرامی اور ان کے صاحبزادہ قطب زماں حضرت سید میر محمد طیب علیہما الرحمہ سے منسوب خانقاہ واحدیہ طیبیہ میں رواں ماہ 26 اکتوبر تا 28 اکتوبر ہونے والے عرس طیبی واحدی کی جملہ تقریبات
زیر نگرانی شہزادہ طاہر ملت حضرت سید سعید اختر میاں و شہزادہ طاہر ملت حضرت سید رضوان میاں صاحب قبلہ اختتام پذیر ہوئی، اور خانقاہ سے جاری ہونے والا مجلہ جام میر کی تاریخ ساز پیشکش معارف طاہر ملت کا رسم اجراء، علماء کرام، مفتیان عظام، ادباء شعراء کی موجودگی میں خانقاہ کے صاحب سجادہ پیر طریقت حضرت سید سہیل میاں قادری واحدی چشتی صاحب قبلہ مدظلہ العالی نے اپنے دست مبارک سے کیا، اور کہا کہ بزرگوں کے اعراس منعقد کرنا باعث برکت و رحمت ہے امت مسلمہ کے لئے بزرگوں کی سیرت و کردار نمونہ عمل ہے لہذا بزرگوں کے فیوض پانے کے لئے ہم اعراس منعقد کرتے ہیں، تین روزہ عرس میں مشاعرہ،تقریری پروگرام،حلقہ ذکر کے ساتھ ساتھ تبرکات شریف کی زیارت بھی کروائی گئی،آل انڈیا واحدی طیبی کانفرنس میں حضرت علامہ مولانا مرتضی شریفی صاحب قبلہ، حضرت علامہ مولانا اسرار احمد فیضی واحدی، حضرت علامہ مفتی حنیف القادری برکاتی نے خطاب کیا۔ خانقاہ کے معتمد خلیفہ طاہر ملت حضرت مولانا عارف القادری واحدی نے بتایا کہ حضور طاہر ملت علیہ الرحمہ کے مختلف النوع خدمات پر مشتمل ضمیمہ معارف طاہر ملت کا رسم اجراء ہوا ۔جس میں ملک کے ممتاز اور مشہور و معروف قلمکار،اور مشائخ عظام اور شعراء کے مناقب مضامین و مقالات موجود ہیں،اس موقع پر حضرت مولانا اسرار احمد فیضی واحدی ،مولانامحمد قمر انجم قادری فیضی مدیر جام میر بلگرام شریف، علامہ ندیم رضا مرکزی بریلی شریف، علامہ قاری ارشادا ازہری صاحب بانی جامعۃ البنات فیضان فاطمہ سینتھل، اور شعراء میں جناب اسداقبال کلکتوی،حضرت قاری محمد علی فیضی واحدی، جناب جاوید صدیقی گونڈوی، قاری اظہار شاہجہان پوری، جناب سیف رضا کانپوری، جناب طفیل شمسی،قاری ابوالحسن واحدی، مولانا غلام عبدالقادر، صوفی سرفراز وغیرہ کے علاوہ کثیر تعداد میں علماء کرام موجود تھے۔

ہماری آواز

ہماری آواز ایک غیر جانب دار نیوز ویب سائٹ ہے جس پر آپ سچی خبروں کے ساتھ ساتھ مذہبی، ملی،قومی، سیاسی، سماجی، ادبی، فکری و اصلاحی مضامین اور شعر وشاعری پڑھ سکتے ہیں۔ یہی نہیں آپ خود بھی ہمیں اپنے پاس پڑوس کی خبریں اور مضامین وغیرہ بھیج سکتے ہیں۔

متعلقہ مضامین و خبریں

جواب دیں

Back to top button