مضامین و مقالات

ہماری ترقی ہی اصل اثاثہ ہے

دنیا میں جن لوگوں کے پاس تخلیقی صلاحیت ہے وہ لوگ فلاح و بہبود اور سرفرازی و سرخروئی بہت ہی آسانی سے حاصل کر لیتے ہیں۔ آپ کو nationally یا انٹرنیشنلی وہ لوگ ہمیشہ top پر نظر آئیں گے، جن کے پاس تخلیقی فکر کے ذریعے ہر مشکل ترین چیز کا بہتر حل ہوتا ہے ۔ چاہے buisness کی دنیا میں دیکھیں، Steve jobs جیسا بندہ جس نے Apple کمپنی ایجاد کی اور اس نے اس کمپنی کو کہاں سے کہاں پہنچا دیا ۔ios جو iPhone کا operating system ہے۔ اور اس کے علاوہ بھی macintosh جو Mac کا اوپریٹنگ سسٹم ہے جس نے پوری دنیا کو ہلا دیا ۔موجودہ وقت میں Elon Musk ہی کو دیکھیں ان سب کے اندر creativity ہوتی ہے وہ لوگ ہمیشہ ترقی کے بارےمیں غور وفکر کرتے ہیں اور اس کو حقیقی طور پر میدان میں لے کر آتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اور creativity لانے کے لیے ان چار چیزوں کو adopt کرنا ہوگا۔ 1 ۔ imagine کریں2۔ ذہن میں لانے کا مقصد کیا ہے 3۔ جس مقصد کو آپ ذہن میں لائے اس کو ہمیشہ قائم رکھنا 4۔ اور اس کو physically میدان میں لانا ۔۔۔۔
اور ان کے ذریعے دنیا کے بےشمار لوگ جو آج ترقی کر رہے ہیں وہ جو بھی سوچتے ہیں حقیقی طور پر میدان میں لے کر آتے ہیں جیسے Mark Zuckerberg نے پہلے سوچا ہی تھا کہ مجھے اپنی زندگی میں ایسا کرنا ہے جس سے پوری دنیا ایک دوسرے سے آسانی سے گفتگو کرنے لگے اور وہ اس کوشش میں لگا رہا اور اس نے facbook لاکر پورا کر دیکھایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سوشل میڈیا اور نوجوان

ہمارے معاشرے میں سوشل میڈیا کے غلط استعمال کی وجہ سے بالخصوص 15 سے 22 سال کے نوجوانوں کو جو عمر ترقی کرنے کی ہوتی ہے اس میں ذہنی مریض بن کر انہوں نے اپنی خوشحال زندگی کو تباہ و برباد کر دیا ہے ، آج کا نوجوان socilization نہیں رہنا چاہتا تنہائی زیادہ پسند کرتا ہے جن لوگوں کو future میں ڈاکٹر، انجینئر ، سائنٹسٹ , میڈیکل فیلڈ سمبھالنا تھی اور ایک بڑا بزنس مین بن کر ہندوستان کو ترقی دلانا تھی تعلیمی اعتبار سے مضبوط کرانا تھا آج وہ صرف سوشل میڈیا پر unethical friend بنا کر اور غلط استعمال کی وجہ سے ڈپریشن کا شکار ہوتے جا رہے ہیں۔۔
آخر کار ایسا کیوں ہے کہ ایک بچہ اپنی پریشانی والدین کو نہ بتا کر سوشل میڈیا پر دوست بنا کر اس کو بتا رہا ہے اس میں والدین کی سب سے بڑی کمی یہی ہے انہوں نے اپنے بچوں کو وقت دینا چھوڑ دیا ریلیشن شپ کمزور کر لئے ہیں حالانکہ والدین اور بچوں کے درمیان دوستی جیسے تعلقات رکھنا چاہیے جس سے بچہ فیس بک پر نہ جاکر آپ سے ہر طرح کی بات شیئر کر سکے تاکہ بچہ پھر کبھی بھی خود کو تنہا محسوس نہیں کرے۔۔۔۔۔۔۔
ہمیشہ یاد رکھیں جو لوگ آج Facebook , Instagram کا استعمال صرف اور صرف دوست بنانا،اور ریلیز دیکھنے کے لیے کرتے ہیں جہاں تک میں نے مطالعہ کیا تو فیس بک اور انسٹاگرام اس کے لئے بالکل نہیں بنائے گئے بلکہ یہ دونوں پلیٹ فارم صرف ، buisness purpose کے لیے بنائے گئے ، اگر آپ اچھی جگہ استعمال کریں گے وہ آپ کو بہتر مستقبل دے سکتے ہیں اور سوشل میڈیا پر بزنس کیسے کرتے ان شاءاللہ پھر کبھی تفصیل سے اس ٹاپک پر بات کریں گے۔۔۔

Time management

ہر شخص کے پاس چوبیس گھنٹے ہیں۔ جو انسان ان اوقات کی قدر کرتا ہے یقیناً وہ انسان اپنے مقصد کو آسانی سے حاصل کر لیتا ہے۔ اور وقت کا غلط استعمال وہی زندگی گزارنے پر مجبور کرتا ہے ،جو آپ گزار رہے ہیں ترقی کرنے والے اپنے وقت کی تعین کرتے ہے، صبح دیر تک سونا آپ کے ارادوں کو کمزور کر سکتا ہے۔ جو لوگ منزلیں پاتے ہیں اور فتح و نصرت کا جزبہ رکھتے ہیں ،وہ زیادہ دیر تک نہیں سوتے ہیں, اور صبح سورج نکلنے سے پہلے اٹھتے ہیں، پھر بعد میں سورج کی طرح روشنی دیتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مصنف ‘tony robbins’ اپنے مشہور کتاب”The 5 AM Club” میں 20-20-20 کے اصول کی وضاحت کی ہے ۔ جس میں وہ کہتا ہے کہ اگر ہم روزانہ صبح 5 بجے اٹھ کر دن کے پہلے گھنٹے میں 20 منٹ ورزش کریں ، 20 منٹ منصوبہ بندی کریں اور آخری 20 منٹ کچھ اچھی پڑھائی کریں تو ہم کر سکتے ہیں ۔ دن کا آغاز بہتر طریقے سے کریں۔ اگر آپ بھی اپنی زندگی میں انقلاب لانا چاہتے ہیں تو وقت کا اچھا استعمال کریں ۔تاریخ گواہ جن لوگوں نے وقت کی قدر کی ہے انہیں لوگوں کی دنیا نے قدر کی ہے ورنہ بے شمار لوگ صفحہ ہستی سے سے مٹ گئے اور نام تک باقی نہ رہا۔

QUALITIES OF A GOOD LEADER

ایک بہترین حقیقی لیڈر اپنی قائدانہ وقار اور قابلیت و استعداد کے ذریعے لوگوں کے دلوں میں جگہ بنا لیتے ہیں، حالانکہ لیڈر صرف وزیراعظم یا صدر پر ہی نہیں بولا جاتا ہے، بلکہ آپ اپنی فیملی کے لیڈر یا کسی کمپنی میں CTO,CMO, CFO,COO,CEO وغیرہ بڑے بڑے عہدوں پر بھی قیادت کر سکتے ہیں اور ایک زبردست قائد وہ جس کے پاس یہ مہارت ہوں:

1-Communication skills 2- creativity
3-Confidence 4-Passion
5-emotional intelligence 6-problem solving
7-focus on the future 8-honesty

زبردست اور حقیقی قیادت کرنے کے لیے یہ سب ہونا بہت ضروری ہے۔ مثال کے طور پر Sundar pichai مدرائئ میں ایک نہایت غریب خاندان سے جزبہ کے ساتھ اٹھ کر ، Stanford University سے ایم ،ایس، مٹیریل سائنس اور انجینئرنگ میں پڑھ کر سلور میڈل لے کر اور اپنے اندر قائدانہ صلاحیت پیدا کر کے گوگل کمپنی کا CEO بن گیا اور آج بے شمار لوگ اس کے نیچے کام کرتے ہیں اس لیے John C. Maxwell کہتا ہے:

"A leader is one who knows the way, goes the way, and shows the way.”

اسی لئے انسان کے پاس غربت ،تکالیف، کچھ بھی ہو اگر جزبہ اور حوصلہ و ہمت ہے تو ہر انسان اپنے اندر قائد بننے کی صلاحیت رکھتا ہے کوئی بھی ملک یا تنظیم اسی وقت ترقی کرتی ہیں جن کا لیڈر متذکرہ اوصاف کا حامل ہوگا اور یہ سب اسی وقت ممکن ہے جب اپنے قیمتی وقت کو ضائع نہ کر کے اچھی جگہ لگائیں۔۔

ازقلم: محمد اسلام خان، اسلامک اسکالر بریلی 8755737168

ہماری آواز

ہماری آواز ایک غیر جانب دار نیوز ویب سائٹ ہے جس پر آپ سچی خبروں کے ساتھ ساتھ مذہبی، ملی،قومی، سیاسی، سماجی، ادبی، فکری و اصلاحی مضامین اور شعر وشاعری پڑھ سکتے ہیں۔ یہی نہیں آپ خود بھی ہمیں اپنے پاس پڑوس کی خبریں اور مضامین وغیرہ بھیج سکتے ہیں۔

متعلقہ مضامین و خبریں

جواب دیں

اسے بھی ملاحظہ کریں
Close
Back to top button