غزل

ہائے دسمبر

بِن تمہارے صنم دسمبر میں
ہو گئے قُلفی ہم دسمبر میں

بھاری پتھّر کوئی جمے جیسے
جم گئے ایسے غم دسمبر میں

ہم کو رہ رہ کے یاد آتے ہیں
اُن کی زلفوں کے خم دسمبر میں

ذہن جم جائے تو بھلا کیونکر
شعر ہوگا رقم دسمبر میں

حرفِ آخر پہ اسم کے تیرے
جم گیا ہے قلم دسمبر میں

یہ صلہ ہے تری محبّت کا
آنکھ ہوتی ہے نم دسمبر میں

جان لے لیں گے اے فیضان آخر
اُن کے ناز و نعم دسمبر میں


ازقلم: فیضان علی فیضان، پاکستان

ہماری آواز

ہماری آواز ایک غیر جانب دار نیوز ویب سائٹ ہے جس پر آپ سچی خبروں کے ساتھ ساتھ مذہبی، ملی،قومی، سیاسی، سماجی، ادبی، فکری و اصلاحی مضامین اور شعر وشاعری پڑھ سکتے ہیں۔ یہی نہیں آپ خود بھی ہمیں اپنے پاس پڑوس کی خبریں اور مضامین وغیرہ بھیج سکتے ہیں۔

متعلقہ مضامین و خبریں

جواب دیں

Back to top button