رحمت دوعالم کی آمد

الدال علیٰ خیر کفاعلہ (شیئر کریں)

ازقلم: محمد مقتدر اشرف فریدی، اتر دیناج پور، مغربی بنگال


ماہ ربیع الاول کی رونقیں ہر سمت چھائی ہوئی ہیں، ہر چہار جانب مسرت و شادمانی کا سماں ہے، کیف و سرور کا حسین و دلکش منظر ہے، یہ تمام تر رعنائیاں، رونقیں اور بہاریں آقائے کائنات، جان کائنات، رسول اعظم، رحمت دوعالم محبوب خدا ﷺ کی ولادت باسعادت کی برکات و خیرات ہیں۔ ربیع الاول یہ ایک ایسا متبرّک مہینہ ہے کہ جس کی نسبت ہمارے آقا و مولا سیّد الانبیا صلّی اللہ تعالٰی علیہ و آلہ و سلّم کی ولادت با سعادت سے ہے۔
قرآن پاک میں اللہ عزّ و جلّ فرماتا ہے:
وما اَرْسَلْناكَ الّا رَحْمَةَ الّلعالَمِيْنَ۔
اے محبوب صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم ہم نے آپ کو تمام جہانوں کے لیے رحمت بنا کر ہی بهیجا۔

اللہ کریم کا فرمان ہے کہ ہمارے آقا صرف ہمارے لئے نہیں بلکہ سارے جہاں کیلئے رحمت ہیں آپ انسان، حیوان، نباتات جمادات الغرض ہر شے کے لئے رحمت ہی رحمت ہیں۔ اپنوں کے لیے بھی رحمت، غیروں کے لیے بھی رحمت، آپ کی شانِ رحیمی اور کریمی سے کوئی محروم نہیں۔ جس طرح اللہ کریم کی ربوبیت کا فیض ساری کائنات کے لیے عام ہے اسی طرح نبی کریم علیہ الصلاة و التسلیم کی رحمت کا فیضان بھی سارے عالم کو محیط ہے۔
آپ کی تشریف آوری سے یہ گھٹا ٹوپ تاریک دنیا منوّر ہوئی، ظلمت کے کالے بادل چهٹ گئے، ضلالت کے اندھیرے چھٹنے لگے، رشد و ہدایت کی قندیل چمکنے لگی، کردار دمکنے لگے، اطوار مہکنے لگے، افکار چمکنے لگے، انوار برسنے لگے اور نور کی کرنوں سے یہ سارا جہاں روشن و منور ہوا۔ قحط سالی سے دوچار سر زمین عرب سر سبز و شاداب، خوشحال و خوشگوار ہو گئ، پوری کائنات میں ایک عظیم انقلاب پیدا ہوگیا- آپ رحمت و شفقت، حلم و کرم، جود و سخا، بخشش و عطا اور اخلاق کریمانہ کا پیکر بے مثال بن کر ظہور پزیر ہوئے۔
جس گهڑی حضور نبی کریم علیہ الصلوة والتسلیم کی ولادت با سعادت ہوئی اس گهڑی آسمان بهی زمین پر رشک کر رہا تها، زمین بهی اپنی قسمت پر نازاں تھی، تمام جانور ایک دوسرے کو مبارک بادی پیش کر رہے تھے، ہر طرف فرحت و مسّرت کا سماں تھا، گویا کہ ہر شی سے صدا آرہی تھی کہ اے مصیبت زدوں اب گھبرانے کی ضرورت نہیں ہے اس لیے کہ حضرت سیدہ بی بی آمنہ رضی اللہ عنھا کی آغوش میں باعث تخلیقِ کائنات، رحمت دو عالم فخر آدم و بنی آدم، اصل کائنات، مالک خشک و تر، قائد بحر و بر، مختار شجر و حجر نور مجسّم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا وجود مسعود ہو چکا ہے جو ساری کائنات کے لیے سراپا رحمت بن کر تشریف لائے ہیں-

حدیث قدسی ہے:
اللہ عزّ و جلّ ارشاد فرماتا ہے: لَوْلاَکَ مَا خَلَقْتُ الدُّنْیَا
اے محبوب اگر تجھے پیدا کرنا مقصود نہ ہوتا تو میں دنیا کو پیدا نہ فرماتا۔ نبی کریم علیہ الصلاۃ والتسلیم کی ذات ہی اس کائنات کی تخلیق کا سبب ہے۔
آپ کی تخلیق اگر مقصود نہ ہوتی تو کائنات ارض و سما کا وجود نہ ہوتا۔ کائنات کی ہر شی کا وجود ذات پاک مصطفیٰ صلّی اللہ تعالٰی علیہ و آلہ و سلّم ہی کے وجود مسعود سے ہے-

چرند پرند، سبزہ، پہاڑ جمادات، نبادات جن و انس غرض ہر شے آپ کی تخلیق کے باعث وجود میں آئیں۔
عاشقِ رسول، اعلیٰ حضرت امام احمد رضا خان قادری محدث بریلوی رضی اللہ تعالٰی عنہ فرماتے ہیں:
وہ جو نہ تھے تو کچھ بھی نہ تھا، وہ جو نہ ہوں تو کچھ بھی نہ ہو،
جان ہے وہ جہاں کی، جان ہے تو جہان ہے۔

اللہ عزّ و جلّ کا بے پایاں فضل و احسان ہے کہ اس نے ہمیں اپنے محبوب پاک، رحمت دو عالم، نبی معظم، نور مجسم آقائے کائنات صلّی اللہ تعالٰی علیہ و آلہ و سلّم کی امتی میں پیدا فرمایا اور اپنے محبوب صلّی اللہ تعالٰی علیہ و آلہ و سلّم کا کلمہ گو بنایا-

الدال علیٰ خیر کفاعلہ (شیئر کریں)

About ہماری آواز

ہماری آواز ایک غیر جانب دار نیوز ویب سائٹ ہے جس پر آپ سچی خبروں کے ساتھ ساتھ مذہبی، ملی،قومی، سیاسی، سماجی، ادبی، فکری و اصلاحی مضامین اور شعر وشاعری پڑھ سکتے ہیں۔ یہی نہیں آپ خود بھی ہمیں اپنے پاس پڑوس کی خبریں اور مضامین وغیرہ بھیج سکتے ہیں۔

Check Also

میلاد النبی ﷺ قرآن و حدیث کی روشنی میں

از قلم: محمد عارف رضا نعیمی ارشدی مرادآبادی، بانی ہمدرد مسلم نعیمی کمیٹی8191927658 الھم لک …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔