منقبت

اے شہید ناز خاک کربلا امداد کن

ازقلم : محمد اشرفؔ رضا قادری

اے حسین ابنِ علی بہرِ خدا امداد کن
از پئے حضرت محمد مصطفیٰ امداد کن

پارۂ قلبِ علی مشکل کُشا امداد کن
’’گُل رُخا، شہزادۂ گلگوں قبا امداد کن‘‘

مہر جلوہ، حاملِ صدق و صفا امداد کن
مہ لقا و پیکرِ صبر و رضا امداد کن

نازشِ بزمِ امامت، اے امام عالی مقام
اے شہیدِ نازِ خاکِ کربلا امداد کن

آپ کے نانا کی امت کے سروں پر دیکھیے
چھائی ہے رنج و مصیبت کی گھٹا امداد کن

توڑ رکھّی ہے کمر سنگِ حوادث نے مری
ناصرِ دیں، دافعِ کرب و بلا امداد کن

موجِ دریائے سخاوت، پیکرِ جود و عطا
چند قطرے جامِ رحمت سے پِلا امداد کن

لختِ قلبِ فاطمہ و نورِ عینِ مرتضیٰ
تیرا اشرف ہے مصائب میں گھِرا امداد کن

اپنے نانا جان کے صدقے میں کر دیں ختم اب
رنج و آلامِ دلِ اشرفؔ رضا امداد کن

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے