اشعاروغزل

ہیپی سٹارٹنگ

ازقلم: لاریب حسنین

چلے آؤ کہ
اکتیس دسمبر سے قبل مل بیٹھیں
پرانے غموں پر رو دیں
نئے خواب سجا لیں
گلے شکوے دور کرنے کی اک کوشش اور سہی
دلوں کو محبت کی ڈور سے باندھ لیتے ہیں
ماضی کی تاریک یادوں کو بھلا کر
آنے والی خوشیوں کے ورق میں رنگ بھرتے ہیں
اک دوجے کی کوتاہیوں کو معاف کر کے
گلے سے لگا لیں۔۔!!
کون جانے اگلے برس
یہ رفاقتیں رہیں نہ رہیں
ساتھ مل بیٹھنے کے لمحے
میسر ہوں نہ ہوں
چلو اک عہد کرتے ہیںب
ھلا کر سبھی تلخ باتیں
نئے سال کی دہلیز پر مسکراہٹوں کے رنگوں سے
"ہیپی سٹارٹنگ” لکھ دیتے ہیں
بیچ کے گیارہ ماہ میں کوئی بچھڑے
تو بھی دل عداوتوں سے پاک ہو
وعدہ کرنے والو!!
کاش کہ اگلے دسمبر میں ہم ساتھ ہوں

ہماری آواز

ہماری آواز ایک غیر جانب دار نیوز ویب سائٹ ہے جس پر آپ سچی خبروں کے ساتھ ساتھ مذہبی، ملی،قومی، سیاسی، سماجی، ادبی، فکری و اصلاحی مضامین اور شعر وشاعری پڑھ سکتے ہیں۔ یہی نہیں آپ خود بھی ہمیں اپنے پاس پڑوس کی خبریں اور مضامین وغیرہ بھیج سکتے ہیں۔

متعلقہ مضامین و خبریں

جواب دیں

Back to top button