غزل

غزل: کسی سے عداوت کریں گے نہیں

نتیجۂ فکر: ظفر پرواز گڑھواوی جھارکھنڈ

کسی سے عداوت کریں گے۔۔۔۔ نہیں
ہم ملکر رہینگے۔۔۔ لڑیں گے ۔۔۔۔۔۔نہیں

یہیں پہ مریں گے جءیں۔۔۔۔ گے یہیں
تیرے دھمکیوں سے۔۔ ڈریں گے نہیں

آوازیں اٹھاءیں گے۔۔۔۔۔۔۔۔ حق کیلیے
مگر ظالموں سے ڈریں گے۔۔۔۔۔۔ نہیں

خدا کیلیے سر کٹا یا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہے جو
خدا کی قسم وہ۔۔۔۔۔ مریں گے نہیں

تمہیں ظلم کرنا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔کر لو مگر
تیرے قدموں پہ ہم۔۔۔۔ گریں گے نہیں

ہیں زندہ ابھی بھی۔۔۔ یہاں نیک لوگ
"صداقت کے پرچم جھکیں گے نہیں”

رکھے دلمیں بغض نبی ۔۔۔۔۔۔۔۔جو ظفر
ہے میرا یہ آقا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہیں گے نہیں

ہماری آواز

ہماری آواز ایک غیر جانب دار نیوز ویب سائٹ ہے جس پر آپ سچی خبروں کے ساتھ ساتھ مذہبی، ملی،قومی، سیاسی، سماجی، ادبی، فکری و اصلاحی مضامین اور شعر وشاعری پڑھ سکتے ہیں۔ یہی نہیں آپ خود بھی ہمیں اپنے پاس پڑوس کی خبریں اور مضامین وغیرہ بھیج سکتے ہیں۔

متعلقہ مضامین و خبریں

جواب دیں

اسے بھی ملاحظہ کریں
Close
Back to top button