شعر و شاعری

سلام : شبیر نے بہشت کا رستہ بتادیا ۔

ازقلم : محمدزاہد رضابنارسی

دین و حیات میں ہے اہم کیا بتادیا
کرکے سناں کی چھاؤں میں سجدہ بتا دیا

اللہ کی قسم وہ جہنم میں جائے گا
جس نے مرے حسین کو مردہ بتادیا

طیبہ سے کربلا کا سفر کرکے آفریں
شبیر نے بہشت کا رستہ بتادیا

بیعت کی پھر تو کیوں ہے گزارش کرے یزید
شہ نے جب اپنا عزم و ارادہ بتادیا

قرباں ہیں اہلِ بیت کے بچے بھی دین پر
اصغر نے تیر کھا کے یہ جذبہ بتادیا

سر کے بھی مول دین ملے تو خرید لو
ابنِ علی نے کر کے یہ سودا بتادیا

فاسق لعیں یزید کی بیعت کریں قبول
ہم سے کبھی بھی ایسا نہ ہو گا بتادیا

"زاہد” نے پوچھا دیں سے جو جنت کا راستہ
شبیر کا ہے نقشِ کفِ پا بتا دیا

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے