گوشہ اطفال

بچوں کو مسجد میں نا لائیں

عشاء کی نماز میں جیسے ہی امام صاحب نے سلام پھیرا، ایک بزرگ میرے ساتھ بیٹھے شخص کے ساتھ شروع ہو گئے کہ چھوٹے بچے کو مسجد میں کیوں لائے ہیں، نابالغ بچوں کو مسجد میں نہ لایا کریں، وہ شخص تو خاموش رہا لیکن میں نے اس بزرگ سے کہا کہ بقیہ نماز کے بعد اس کا جواب آپ کو میں دیتا ہوں، ابھی آپ خاموش ہو جائیں پلیز،
باقی نماز مکمل کرنے کے بعد میں ادھر ہی بیٹھ گیا، اس بزرگ نے نماز مکمل کی تو میں نے ان سے پوچھا کہ آپ کے کتنے بیٹے ہیں۔۔۔؟
انہوں نے جواب دیا ماشاءاللہ تین ہیں اور ادھر ہی سب کے گھر ساتھ ساتھ ہی ہیں،
میں نے پھر پوچھا کہ پوتے کتنے ہیں۔۔۔؟
کہنے لگے، ماشاءاللہ تینوں بیٹے صاحبِ اولاد ہیں۔ تینوں سے پانچ پوتے ہیں، میں نے پوچھا کہ ابھی عشاء کی نماز پر آپ کے بیٹوں اور پوتوں میں سے کوئی آیا تھا۔۔۔؟
انہوں نے نفی میں سر ہلا دیا،
میں نے انہیں کہا کہ بزرگ! اگر بچپن سے ہی بچوں کو مسجد میں ساتھ لانے کی عادت ڈالی ہوتی تو ابھی آپ کے بیٹوں اور پوتوں میں سے بھی یہاں مسجد میں موجود ہوتے، جب بچے چھوٹے ہوتے ہیں تو وہ مسجد آنے کی ضد کرتے ہیں تب ہم انہیں منع کر دیتے ہیں، وہ روتے ہیں، ضد کرتے ہیں لیکن انہیں روتا چھوڑ کر آجاتے ہیں، بعد میں بڑے ہو جاتے تو آپ کہتے ہیں تو وہ نہیں آتے، بچپن سے ہی عادت بنانی پڑتی ہے، بات تھوڑی سی انہیں سمجھ آئی، مگر کہنے لگے کہ ٹھیک ہے لیکن نابالغ بچوں کو نہیں لانا چاہئے، وہ دوسروں کی نماز خراب کرتے ہیں،
میں نے کہا کہ بزرگ!بچوں کو سات سال میں ہی نماز پڑھانے کا حکم ہے اور دس سال تک نہ پڑھیں تو سختی کا حکم ہے، اب سات سال کا کونسا بچہ بالغ ہو جاتا ہے۔۔۔؟
کیا آپ نے حدیث شریف میں پڑھا ہے کہ سیدنا حسن اور حسین رضی اللہ تعالیٰ عنہما ، نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی کمر مبارک پر چڑھ جاتے تھے اور انہیں سجدہ بھی لمبا کرنا پڑ جاتا تھا، پھر خطبہ جمعہ کے دوران بھی جب یہ دونوں آتے تو نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم انہیں اٹھا کر پاس ممبر پر بٹھا لیتے تھے، اور بھی کئی بچوں کا ذکر ملتا ہے، تو کیا یہ بچے چھوٹے نہیں تھے۔۔؟
اور نماز کیسے خراب ہوتی۔۔۔؟
بچوں کے شور سے۔۔؟ تو باہر گلی سے شور نہیں آ رہا کیا۔۔۔؟
آگے گزرنے سے۔۔۔؟ تو آگے سے بچے گزر جائیں انہیں کوئی گناہ نہیں کیونکہ وہ چھوٹے ہیں،
کوئی بھی بچہ چند دن بھی مسجد آجائے تو اسے سارے ادب و آداب کا پتہ چل جاتا ہے،
پھر میں نے پچھلی صف کی طرف اشارہ کیا کہ وہ دو بچے بیٹھے ہیں، دونوں میرے بیٹے ہیں، ایک دس سال کا اور دوسرا چار سال کا، بڑا خود شوق سے آیا ہے کہ اسے پتہ ہے اب اس پر نماز فرض ہے اور چھوٹا خود ضد کر کے آیا ہے، میں نے کہا بھی تھا کہ ابھی بہت سردی ہے، آج نہ آؤ لیکن اس نے جرسی کوٹ پہنا، بوٹ پہنے اور آگیا، ابھی دیکھیں سکون سے بیٹھے ہیں، دونوں کو مسجد کے آداب کا پتہ ہے،
میرے والد صاحب مجھے چھوٹے میں ہی مسجد ساتھ لے کر جاتے تھے۔ اس کے بعد اللہ کے کرم سے ایسی عادت بنی کہ کسی وجہ سے جماعت رہ جائے تو بے چینی لگی رہتی ہے،
فرانس میں دیکھا کہ وہاں بسنے والے عربوں اور ترکوں میں نماز کا رجحان بہت زیادہ ہے، اس کی باقی کے ساتھ ایک وجہ یہ بھی ہے کہ وہ اپنے بچوں کو چھوٹے وقت سے ہی مسجد میں ساتھ لاتے ہیں، جبکہ یہاں برصغیر پاک و ہند میں کوئی بچہ مسجد آجائے تو اسے ڈانٹا جاتا ہے، کئی مساجد میں شور کرنے یا شرارتیں کرنے پر مارا جاتا ہے، اور یوں اسے شروع سے ہی مساجد سے متنفر کر دیا جاتا ہے، اس وجہ سے وہ مسجد جو جمعہ کی نماز پر بھری ہوتی ہے، اسی میں باقی نماز کے اوقات میں پانچ دس فیصد سے زیادہ نمازی نہیں ہوتے،
مسجد اللہ کا گھر ہے، اس پر بچوں کا بھی اتنا حق ہے جتنا بڑوں کا، جو بچے آئیں انہیں پیار دیں اور پیار سے سمجھائیں، جو بچوں کو ساتھ لائے اسے ایسے نہ گھوریں کہ جیسے اس نے بہت بڑی غلطی کر دی ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے