اشعاروغزلنعت رسول

نعت رسول: مقدر کے سکندر بھی ترے در کے ہی پالے ہیں

نتیجۂ فکر: شمس الحق علیمی، مہراج گنج

مقدر کے سکندر بھی ترے در کے ہی پالے ہیں
تبھی تو وہ زمانے میں سبھی سے ہی نرالے ہیں

‏‎جو آئے ہیں ترے محبوب کے در پر زیارت کو
یہ عاشق کون سی بستی کے یا رب رہنے والے ہیں

‏‎چلا جب قافلہ سوئے حرم تو رو کے میں بولا
مرے مولا یہاں سے جو گئے تیرے حوالے ہیں

‏‎‏نبی کے ذکر کی محفل سجائی جس نے دنیا میں
لحد میں اس کی ہر جانب اجالے ہی اجالے ہیں

بلالو اے مرے آقا ہمیں بھی شہرِ طیبہ میں
یہاں پر ہند میں مشکل سے اپنا دل سنبھالے ہیں

‏‎مدینے کے مسافر کو وہاں پر دیکھ کر آقا
یہی کہتا ہے شمسی کب مرے دن آنے والے ہیں

ہماری آواز

ہماری آواز ایک غیر جانب دار نیوز ویب سائٹ ہے جس پر آپ سچی خبروں کے ساتھ ساتھ مذہبی، ملی،قومی، سیاسی، سماجی، ادبی، فکری و اصلاحی مضامین اور شعر وشاعری پڑھ سکتے ہیں۔ یہی نہیں آپ خود بھی ہمیں اپنے پاس پڑوس کی خبریں اور مضامین وغیرہ بھیج سکتے ہیں۔

متعلقہ مضامین و خبریں

جواب دیں

Back to top button