غزل

غزل: نیند بھی ہو گئی خفا اب تو

نتیجۂ فکر: ظفر پرواز گڑھواوی جھارکھنڈ

اس کی یادو میں اسط رح کھویا
نیند بھی ہو گئی۔۔ خفا اب تو

میری ماں کی دعا کا ہے صدقہ
ٹل گئی میری۔۔۔۔۔۔ ہر بلا اب تو

کب تلک راز تم۔۔۔۔ ۔۔چھپاءوگے
ہو گیا دیکھیے۔۔۔۔ عیاں اب تو

وہ گیا ہے تو آءےگا۔۔۔ ہی نہیں
ہاتھ سے تیرے وہ گیا ۔۔۔۔اب تو

کتنے بکواس کر رہے۔۔۔ ہو جناب
بند کر لیجیے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔زباں اب تو

تیری اوقات کا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔چلےگا پتہ
دینا ہے تجھکو امتحاں ۔۔۔اب تو

اے ظفر ہو گءے۔۔۔۔۔ بہت ہی دن
اک نیا تم غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سنا اب تو

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے