قومی ترانہ

قومی گیت: مرے پیارے اے وطن

نتیجہ فکر: ذکی طارق بارہ بنکوی
سعادت گنج،بارہ بنکی،یوپی

مرے پیارے اے وطن مرے پیارے اے وطن
ساری دنیا سے حسیں اور نرالے اے وطن
مرے پیارے اے وطن مرے پیارے اے وطن

تیری عظمت پہ کوئی آنچ نہ آنے دیں گے
اس ترنگے کا کبھی مان نہ جانے دیں گے
خونِ دل اپنا پلا کر مرے پالے اے وطن
مرے پیارے اے وطن مرے پیارے اے وطن

بسمل،اشفاق،حمید اور بھگت سنگھ تیرے
جب تری آن پہ ہنستے ہوئے قربان ہوئے
ملے آزادی کے تب جاکے اجالے اے وطن
مرے پیارے اے وطن مرے پیارے اے وطن

جن کی تو جاگتی آنکھوں کا سہانا سا ہے خواب
گاندھی و نہرو کا دنیا میں نہیں کوئی جواب
کیا حسیں رتن تری گود نے پائے اے وطن
مرے پیارے اے وطن مرے پیارے اے وطن

مرے بھارت اے مرے ملک مرے جانِ جہاں
تری شان اور تری شوکت کے انوکھے ہیں نشاں
گرجا و مندر و مسجد اور شوالے اے وطن
مرے پیارے اے وطن مرے پیارے اے وطن

یہ "ذکی” ہی نہیں تنہا ہے پرستار ترا
یعنی شیدائی ہے یہ سارا ہی سنسار ترا
ہر کہیں پر ہیں ترے چاہنے والے اے وطن
مرے پیارے اے وطن مرے پیارے اے وطن

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے