غزل: تری زلفوں کے علاوہ کوئی زنجیر ہے کیا

الدال علیٰ خیر کفاعلہ (شیئر کریں)
خیال آرائی: اسانغنی مشتاق رفیقیؔ

تری زلفوں کے علاوہ کوئی زنجیر ہے کیا
تیری تقدیر سے بہتر، کوئی تقدیر ہے کیا
یہ مرا وہم ہے یا تیری حقیقت ہے یہی
آئینہ تیری ہی ایک دوسری تصویر ہے کیا
لوگ پتھر کے عمارات پہ حیران ہیں کیوں
تیرے پیکر سے بھی نادر کوئی تعمیر ہے کیا
ذکروہ کیا کہ ترا نام نہ آئے جس میں
تیری مدحت نہ ملے جس میں وہ تحریر ہے کیا
میں نے دیکھا ہے اُسے خواب میں، بوسہ دیتے
کوئی بتلائے کہ اس خواب کی تعبیر ہے کیا
کر کے پیدا مجھے، رسوا بھی کیا دنیا میں
حشر میں پوچھوں گا رب سے، مری تقصیر ہے کیا
تو نے لکھا ہے نوشتہ تو بتا دے یہ بھی
اس سے چھٹکارہ ہو ایسی کوئی تدبیر ہے کیا
رجم کردو یا ابھی داخلِ زنداں کردو
میں ہوں مجرم تو مرے جرم کی تعزیر ہے کیا
لوگ سب چل دئے اُٹھ اُٹھ کے رفیقی آخر
دار پر مجھ کو چڑھانے میں یہ تاخیر ہے کیا

الدال علیٰ خیر کفاعلہ (شیئر کریں)

About ہماری آواز

ہماری آواز ایک غیر جانب دار نیوز ویب سائٹ ہے جس پر آپ سچی خبروں کے ساتھ ساتھ مذہبی، ملی،قومی، سیاسی، سماجی، ادبی، فکری و اصلاحی مضامین اور شعر وشاعری پڑھ سکتے ہیں۔ یہی نہیں آپ خود بھی ہمیں اپنے پاس پڑوس کی خبریں اور مضامین وغیرہ بھیج سکتے ہیں۔

Check Also

یہ آئی بہار عید کے دن

ہے کانپور میں یہ آئی بہار عید کے دنخوشی سے چہروں پہ آیا نکھار عید …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔