ایسا نہیں کہ پاؤں میں چھالے نہیں رہے!

الدال علیٰ خیر کفاعلہ (شیئر کریں)
تحریر: ازہرالقادری
اس سے بڑھ کردنیاوی قیامت کا نقشہ اورکیاہوگا۔۔۔۔۔ سورج کی تمازت پورے شباب پرتھی۔۔۔۔۔ زمین آگ اگل رہی تھی۔۔۔۔۔آسمان شعلے برسارہاتھا۔۔۔۔۔ گرم گرم ہواؤں کے جھونکے آلام و مصائب کے پہاڑتوڑرہے تھے۔۔۔۔۔ نسیم سحری کادوردورتک کوئی نام ونشان نہیں تھا۔۔۔۔۔ تقریبادومہینوں سے آئے دن انسانیت کاجنازہ شہرخموشاں کی طرف جاتاہوا نظرآرہاتھا ۔۔ ۔۔۔ گردش زمانہ نے خاص کر مزدوروں اورمجبوروں پردہری قیامت ڈھانے کی مکمل تیاری کرلی تھی۔۔۔۔۔اسی عالم میںحالات سے مجبورہوکردن کے اجالے میںعروس البلادسے ایک ستم کامارا اپنے گاؤں کے لیے رخت سفرباندھ چکاتھا۔۔۔۔۔کئی میلوں کاسفرطے کرنے کے بعدتھک ہارگیاتھا۔۔۔۔۔ شدت پیاس سے گلارندھ چکاتھا۔۔۔۔۔ ہونٹ سوکھے جارہے تھے۔۔۔۔۔ بھوک قدم قدم پرتڑپارہی تھی۔۔۔۔۔ چہرے کاجغرافیہ بگڑاہوانظرآرہاتھا۔۔۔۔۔ آنکھیں اشک بارتھیں۔۔۔۔۔ بال گردوغبارسے اَٹے ہوئے تھے۔۔۔۔۔ دل رورہاتھا۔۔۔۔۔ چہرے کی اداسیاں اس کے اندرکے دردوکرب کاخطبہ پڑھ رہی تھیں۔۔۔۔۔ سرپربے بسی اوربے کسی کاسائبان قبضہ جمائے ہوئے تھا۔۔۔۔۔   حیرانی وپریشانی کا دوردورہ تھا۔۔۔۔۔ حالات ہی کچھ ایسے بن چکے تھے کہ ہرکس وناکس کے سامنے ہاتھ پھیلانے کی ہمت نہیں تھی۔۔۔۔۔ چلتے چلتے پاؤں میں چھالے پڑگئے تھے۔۔۔۔۔  شام ہوتے ہوتے اب دو قدم بھی چلنے کی سکت باقی نہ تھی۔۔۔۔۔ 
رات کی تاریکی تھی۔۔۔۔۔ ہرطرف سناٹاتھا۔۔۔۔۔ چاروں جانب ہوکاعالم تھا۔۔۔۔۔ ہرطرف خون کے پیاسوں کاپہراتھا۔۔۔۔۔ قدم قدم پردہشتوں کاسایہ تھا ۔۔۔۔۔  کہیں سواریاں تھیں۔۔۔۔۔ کہیں پیدل ہی چلاجارہاتھا۔۔۔۔۔  تلؤوں کے آبلے پھوٹ پھوٹ کربہ رہے تھے۔۔۔۔۔  آنکھوں کاچشمہ سوکھ کررہ گیاتھا۔۔۔۔۔ ننھاسادل۔۔۔۔۔ کم سنی کی عقل۔۔۔۔۔ کچھ سمجھ میں نہیں آرہاتھا۔۔۔۔۔ کہاں جائے؟۔۔۔۔۔ کیاکرے؟۔۔۔۔۔ کہیں آبادیاں تھیں۔۔۔ ۔۔ کہیں سنسان بیابان۔۔۔۔۔ کہیں پہاڑیاں تھیں۔۔۔۔۔ کہیں بڑے بڑے میدان ۔۔۔۔۔ کہیں جنگلات تھے۔۔۔۔۔ پتہ کھڑک رہاتھا۔۔۔۔۔ دل دھڑک رہاتھا۔۔۔۔۔ سہماہواسماں تھا۔۔۔۔۔ خوف وہراس کی کیفیت تھی۔۔۔۔۔ خاردارجھاڑیاں تھیں ۔ ۔۔۔۔ پرپیچ گھاٹیاں ۔۔۔۔ سنگ لاخ  وادیاں تھیں۔۔۔۔۔ پوراوجودلرزہ براندام تھا۔۔۔۔۔ جائے توکہاں جائے۔۔ ۔۔۔ سہارالے توکس کا۔۔۔۔۔ مددماگے توکس سے ۔۔۔۔ ۔ پکارے توکسے پکارے۔۔۔۔۔ دردوکرب کااظہارکرے توکس سے ۔۔۔۔۔دنیاداری کے حرص میںانسانی شرافت زیرو زبر تھی۔۔۔۔۔ آدمی کے دل میں بے گانہ پن کاطوفان ہی نہیں بلکہ زلزلہ برپاتھا۔۔ ۔۔۔ پھربھی منزل مقصودتک پہنچنے والی امیدویقین کی دنیالالہ زاربنی ہوئی تھی۔۔۔۔۔ چلتے پھرتے، جیسے تیسے، سوتے جاگتے چاندکی چاندنی گرہن آلودہوئی اورسورج کی روشنی کی جلوہ سامانیوں سے نگاہیں خیرہ ہوکررہ گئیں۔۔۔۔۔ 
دن کااجالا تھا۔۔۔۔۔ آہستہ آہستہ قدم بڑھانے کی ہمت جٹارہاتھا ۔۔۔ ۔۔  سرراہ قدم قدم پرحکومتی اہل کاروں کے دستے تعینات تھے۔۔۔۔۔ حالات کے تناظرمیں ان کی مہمان نوازی سے ہرکوئی عاجزوپریشان تھا۔۔۔۔۔ رب ہی جانے ان حالات میں بھی ان کے سینوں کے اندردل کی جگہ سخت پتھرنے کیوں لے لیاتھا۔۔۔۔۔ ایسالگتاتھاانسان زندہ ہے ۔۔۔۔۔ انسانیت مرچکی ہے۔۔۔۔۔ آدمی باقی ہے ۔۔۔۔۔ آدمیت ختم ہوچکی ہے۔۔۔۔۔ مٹی کاپتلا کھڑاہے۔۔ ۔۔۔  رحم وکرم کامادہ غائب ہے۔۔۔۔۔ اعانت وحمایت عنقاہوکررہ گئی ہیں۔۔۔۔۔ ظلم وستم کابازارگرم ہے۔۔۔ ۔۔ جوروجفا کاسورج اپنی تکلیف دہ شعاؤں کے ساتھ نمودارہوچکاہے۔۔۔۔۔ ناگفتہ بہ مناظرنگاہوں کے سامنے ہیں۔۔۔۔۔ جس کوفضل واحسان کاسنگم بناکربھیجاگیاتھاوہ آج درندہ بناہواہے۔۔۔۔۔ ایک انسان دوسرے انسان کے خون کاپیاسانظرآرہاہے۔۔۔۔۔ 
زندگی کی کشتی مایوسیوں کے منجدھارمیں ہچکولے کھارہی تھی۔۔۔۔۔ نگاہوں کے سامنے تاریکیوں کی عمربڑھتی جارہی تھی۔۔۔۔۔ آرزؤں کاسویراچمکنے کے آثارظاہراًختم ہوچکے تھے۔۔۔۔۔ نشاط وسرورکی لذتوں سے روح سرشارہوگی کہ نہیں ؟کیامعلوم!۔۔۔۔۔ امیدوں کی مرجھائی ہوئی کلیوں کوزندگی کانیافروغ ملے گایانہیں؟کیاپتہ!۔۔۔۔۔  جدبات کے دہکتے ہوئے انگاروں پرآنسؤں کے پانی کاچھینٹادینامقدربن چکاتھا۔۔۔۔۔ طویل مسافت کے تصوراتی تکان کی ہنگامہ خیزکیفیات نے سارے جسم کونڈھال کرکے رکھ دیاتھا۔۔۔۔۔شبانہ روز بغیرکچھ کھائے پیے وہ اپنے وطن کی جانب رواں دواں تھا۔۔۔۔۔  وقت ہی کچھ ایساتھاکہ بے چارہ جگہ جگہ اچھوت سمجھاجارہاتھا۔۔۔۔۔ لوگوں کے لیے اس کاوجوددنیاوی جہنم سے کم تصورنہیں کیاجاتاتھا۔۔۔۔۔ نہ کہیں پانی میسرتھا۔۔۔۔۔ نہ کہیں کھانا۔۔۔۔۔ نہ کہیں کوئی سایہ تھاکہ اس چلچلاتی ہوئی دھوپ میں اپناسرچھپاتا۔۔۔۔۔ کوئی پرسان حال نہ تھا۔۔۔۔۔ دیکھنے والے چورنظروں سے دیکھ رہے تھے۔۔۔۔۔ اہل دنیاکی نگاہوں میں مشکوک تھا وہ۔۔۔۔ ۔ 
”ہائے رے
وقت کی ستم ظریفی! ۔۔۔۔۔ اس بھری دنیامیں ایساکوئی بھی نہیں جو حال دل دریافت کرتا۔۔۔۔۔ شل شدہ بازؤں کوسہارادیتا۔۔۔۔۔ غمگین اوررنجیدہ چہرے پر تسکین کا مرہم لگاتا۔ ۔۔۔۔ آنکھوں کے ذریعہ آنسؤں کی شکل میں ٹپکتے ہوئے موتیوں کواپنے دامن کرم میں جگہ دیتا۔۔۔۔۔ ماں ہوتی توممتاکی چادراڑھادیتی۔۔۔۔۔ باپ ہوتاتولاڈوپیارکی باہیں پھیلادیتا۔۔۔۔۔ بھائی ہوتاتوخونی رشتہ استوارکرلیتا۔۔۔۔۔ بہن ہوتی توماجائے کی خیریت پوچھ لیتی۔۔۔۔۔ عزیزواقارب ہوتے تواپنائیت کااظہارکر،سکون واطمینان کی نیندسلادیتے۔۔۔۔۔ رشتہ دارہوتے تواپناحق رشتہ داری ادا کرتے۔۔۔۔۔ کنبہ قبیلہ کے لوگ ہوتے توہمدردی کااظہارکرکے ڈھارس بندھاتے۔۔۔۔۔ لیکن حال یہ تھا کہ ۔۔۔۔۔ اس بھری دنیامیں کوئی بھی ہمارانہ ہوا۔۔۔۔۔”
وہ بیچارہ بے یارومددگار اپنے اردگردسے گزرنے والے سینکڑوں پتھردل انسانوں سے عالم تصورمیں کچھ اس طرح سے فریادکرتاجارہاتھا۔۔۔۔۔ کہ میرے جمال حقیقت پربے شمارنقاب پڑے ہوئے ہیں۔۔۔۔۔ تاکہ تمھارے اندر تاب نظرباقی رہ سکے۔۔۔۔۔ اورتم میرے چہرے کی برکتیں لوٹ سکو۔۔۔۔۔مگربصارت انسانیت نہیں بلکہ صرف اورصرف چشم انسانی میرے چہرۂ حقیقت کاجمال دیکھنے کی توانائی نہیں رکھتی!۔۔۔۔۔ 
چلاجارہاتھا۔۔۔۔۔ چلتاچلاجارہاتھا۔۔۔۔۔ تھکن سے چورتھا،پھربھی چلاجارہاتھا۔۔۔۔۔ بہت ساری رکاوٹیں آڑے آرہی تھیں،پھربھی چلاجارہاتھا۔۔۔۔۔ دشواریوں کاسامناہورہاتھا، پھربھی چلاجارہاتھا۔۔۔۔ ۔ مشکلات کا ہجوم تھا،پھربھی چلاجارہاتھا۔۔۔۔۔ جگہ جگہ آلام ومصائب کے پہاڑسینہ تانے کھڑے تھے،پھربھی چلاجارہاتھا۔۔۔۔۔  راہ کی کٹھنائیاں پرتپاک اندازمیںخیرمقدم کے لیے سراپاانتظارتھیں،پھربھی چلاجارہاتھا۔۔۔۔۔ آندھی تھی،پھربھی چلاجارہاتھا۔۔۔۔۔ طوفان تھا،پھربھی چلاجارہاتھا۔۔۔۔۔ سخت بارش تھی،پھربھی چلاجارہاتھا۔۔۔۔۔ پتھر برس رہے تھے،پھربھی چلاجارہاتھا۔۔۔۔۔ زہریلی ہواؤں سے پیداہونے والے بونڈرسے مقابلہ تھا،پھربھی چلاجارہاتھا۔۔۔۔۔ گرم گرم ریت پرچلتے ہوئے پاؤں چھلنی ہوچکے تھے،پھربھی چلاجارہاتھا۔۔۔۔۔ ہاتھ تھا کہ اٹھنے کانام نہیں لے رہاتھا،پھربھی چلاجارہاتھا۔۔۔۔۔ پاؤں تھے کہ چلنے سے عاجزوبے زارتھے،پھربھی چلاجارہاتھا۔۔۔۔۔وطن پہنچنے کی تگ ودو میں راہ کے سخت ترین مراحل بھی ہاتھوں میں زنجیراورپاؤںمیں بیڑی نہ پہناسکے۔۔۔۔۔
ایک خواہش تھی۔۔۔۔۔  ایک شوق تھا۔۔ ۔۔۔ ایک امید تھی۔۔۔۔۔ ایک آرزوتھی۔۔۔۔۔ ایک تمناتھی۔۔۔۔۔ ایک لگن تھی۔۔۔۔۔ ایک عشق تھا۔۔۔۔۔ ایک خیال تھا۔۔۔۔۔ ایک تڑپ تھی۔۔۔۔۔ جیسے جیسے اپناگاؤں گھر قریب آتاجارہاتھا ویسے ویسے تڑپ اوربڑھتی جارہی تھی۔۔۔۔۔ امیدوآرزو کے ہجوم  وافکارمیں اس کی زندگی کاکارواں آگے بڑھتاجارہا تھا۔۔۔۔۔ حالات کے تناظرمیں عقل ناہنجارکے گھرتک بہ خیروعافیت نہ پہنچنے کے طعنہ سے یقین کاآبگینہ گھائل ہوتاجارہاتھا۔۔۔۔۔ اداسیاں پرزوراستقبال کے لیے کھڑی تھیں۔۔۔۔۔ شاخ سے ٹوٹ جانے والے پتے کی طرح اس کے چہرے کی تمام رونقیں اڑچکی تھیں۔۔۔۔۔وہ انتہائی پرسوزاورجاں گسل مراحل سے گزررہاتھا۔۔۔۔۔ لوگوں کے اچھوت والے طعنے اس کے سینے میں نشترکی طرح چبھ رہے تھے۔۔۔۔۔ دل کاوہ آبگینہ جوناامیدیوں اورمایوسیوں کی زدسے سنبھال سنبھال کررکھاتھا اچانک چھن سے ٹوٹ گیا۔۔۔۔۔ پندرہ سولہ سوکلومیٹرکی مسافت طے کرنے کے بعدمنزل کے قریب پہنچ کراپنی زندگی سے شکست کھاچکاتھا!۔۔۔۔۔  بدحواسی کے عالم میں محلے کے کسی خیرخواہ نے اس کے گھرآکراس کی ماںکوخبردی کہ اچانک تمھارابیٹابے ہوش ہوچکاہے ۔۔۔۔۔یک بہ یک اس غریب کی کٹیامیں شوربرپاہوا۔۔۔۔۔ نبض ٹھنڈی ہوچکی تھی اورآنکھیں پتھراگئیں تھیں۔۔۔۔۔ سارے محلے میں کہرام مچاہواتھا۔۔۔۔۔ ممتاکے پہنچتے پہنچتے بیٹے کی زندگی کاچراغ گل ہوچکاتھا۔۔۔۔۔ ! ع
تکلیف ہے کہ دیکھنے والے نہیں رہے!
الدال علیٰ خیر کفاعلہ (شیئر کریں)

About ہماری آواز

ہماری آواز ایک غیر جانب دار نیوز ویب سائٹ ہے جس پر آپ سچی خبروں کے ساتھ ساتھ مذہبی، ملی،قومی، سیاسی، سماجی، ادبی، فکری و اصلاحی مضامین اور شعر وشاعری پڑھ سکتے ہیں۔ یہی نہیں آپ خود بھی ہمیں اپنے پاس پڑوس کی خبریں اور مضامین وغیرہ بھیج سکتے ہیں۔

Check Also

ایسی گرمی ہے کہ پیلے پھول بھی کالے پڑ گئے

ازقلم: محمد ہاشم اعظمی مصباحینوادہ مبارکپور اعظم گڈھ یوپی مکرمی! یہ بات سب کو معلوم …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔