غزل

غزل: جام محبت پلانے سے پہلے

خیال آرائی: ظفر پرواز گڑھواوی

یہ جام محبت پلانے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔سے پہلے
کہاں ایسا تھا دل لگانے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سے پہلے

بہت سوچ کر تم قدم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کو بڑھانا
صنم کی محبت میں جانے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سے پہلے

یہ روزہ نماز حج زکوٰۃ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ و قرآں
کہاں تھا محمد ‌ﷺکے آنے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سے پہلے

توں محشر میں کیا منھ دکھاءوگے سوچو
غریبوں کو پہلے ستانے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سے پہلے

اگر چاہتے ہو مزہ خلد۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کا تو
کرو نیک اعمال جانے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سے پہلے

پرکھنے کی عادت کرو اے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ظفرتم
کسی سے بھی آنکھیں۔۔۔۔ ملانے سے پہلے

ظفر میرے آقا کا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔نور موجود
وہ آدم کا پتلا بنانے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سے پہلے

ہماری آواز

ہماری آواز ایک غیر جانب دار نیوز ویب سائٹ ہے جس پر آپ سچی خبروں کے ساتھ ساتھ مذہبی، ملی،قومی، سیاسی، سماجی، ادبی، فکری و اصلاحی مضامین اور شعر وشاعری پڑھ سکتے ہیں۔ یہی نہیں آپ خود بھی ہمیں اپنے پاس پڑوس کی خبریں اور مضامین وغیرہ بھیج سکتے ہیں۔

متعلقہ مضامین و خبریں

جواب دیں

Back to top button