غزل

غزل: رات بھر بولتا رہا ہے کوئی

خیال آرائی: ظفر پرواز گڑھواوی، جھارکھنڈ

کون ہے اسکا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ نام لے لے کر
رات بھر بولتا رہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہے کوئی

وہ خطا کرکے بھی مجھکو ڈانٹے
الٹی گنگا بہا رہا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔ کوئی

اسکی قدموں کی ۔۔۔آرہی ہے صدا
لگ رہا ہے کہ جا رہا ہے۔۔۔۔۔ کوئی

رات بھر نیند کیوں۔۔۔۔۔ نہیں آئی
جام الفت پلا رہا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کوئی

اب تو خاموش ہی ۔۔۔۔۔۔رہو پرواز
فالتو بڑ بڑا رہا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کوئی

ہماری آواز

ہماری آواز ایک غیر جانب دار نیوز ویب سائٹ ہے جس پر آپ سچی خبروں کے ساتھ ساتھ مذہبی، ملی،قومی، سیاسی، سماجی، ادبی، فکری و اصلاحی مضامین اور شعر وشاعری پڑھ سکتے ہیں۔ یہی نہیں آپ خود بھی ہمیں اپنے پاس پڑوس کی خبریں اور مضامین وغیرہ بھیج سکتے ہیں۔

متعلقہ مضامین و خبریں

جواب دیں

اسے بھی ملاحظہ کریں
Close
Back to top button