علامہ اقبال کی فکر و فن پر امام احمد رفاعی کبیر رحمۃ اللہ علیہ کا اثر

الدال علیٰ خیر کفاعلہ (شیئر کریں)

ازقلم: مدثر جمال رفاعی تونسوی، پاکستان

محمد عبد اللہ قریشی مدیر ادبی دنیا ، لاہور ، حکم رفاعیہ کے اردو ترجمے کے پیش لفظ میں لکھتے ہیں کہ :
علامہ اقبال علیہ الرحمۃ جب مثنوی اسرار و رموز لکھ رہے تھے ، تو یہ کتاب (الحکم الرفاعیۃ) خاص طور پر ان کے زیرِ مطالعہ تھی ۔
انہوں نے شیخ احمد کبیر رفاعی اور ان کی تعلیمات کے متعلق "رموزِ بے خودی” میں مندرجہ ذیل اشعار کہے ہیں:

شیخ احمد سیدِ گردوں جناب
کاسبِ نور از ضمیرش آفتاب
گُل کہ می پوشد مزارِ پاکِ اُو
لا اِلہ گویاں دمد از خاکِ اّو
با مریدے گفت اے جانِ پدر
از خیالاتِ عجم باید حذر
زانکہ فکرش گرچہ از گردوں گُذشت
از حدِ دینِ نبی بیروں گُذشت
اے برادر ایں نصیحت گوش کُن
پند آں آقائے ملت گوش کُن
قلب را زیں حرفِ حق گرداں قوی
با عرب در ساز تا مُسلم شوی

اردو مفہوم:
شیخ احمد رفاعی ایک بلند پایہ سید ہیں ، سورج بھی ان کے ضمیر سے نور حاصل کرتا ہے ، انہوں نے اپنے ایک مرید سے کہا ”اے بیٹا! تجھے عجم کے خیالات (غیر اسلامی افکار و نظریات) سے دور رہنا چاہیے ۔
اگر چہ عجمیوں کے خیالات آسمان سے بھی آگے چلے گئے ہیں لیکن وہ نبی کریم ﷺ کے دین کی حدود میں نہیں رہے ۔
اے بھائی ! تو اس نصیحت پر دھیان دے اور ملت اسلامیہ کے آقا ﷺ کی نصیحت کو ہرگز نہ بھول ۔
تو اپنے دل کو اس سچی بات سے مضبوط بنا اور صحیح مسلمان ہونے کے لیے عرب (یعنی سب سے اول عرب میں دین لانے والے نبی اکرمﷺ اور ان کے اہل بیت و اصحاب رضی اللہ عنہم ) سے موافقت اختیار کر۔

(بحوالہ : حکمتِ رفاعی ۔ ناشر : آئینہ ادب ، چوک مینار ، انار کلی ، لاہور)

الدال علیٰ خیر کفاعلہ (شیئر کریں)

About ہماری آواز

ہماری آواز ایک غیر جانب دار نیوز ویب سائٹ ہے جس پر آپ سچی خبروں کے ساتھ ساتھ مذہبی، ملی،قومی، سیاسی، سماجی، ادبی، فکری و اصلاحی مضامین اور شعر وشاعری پڑھ سکتے ہیں۔ یہی نہیں آپ خود بھی ہمیں اپنے پاس پڑوس کی خبریں اور مضامین وغیرہ بھیج سکتے ہیں۔

Check Also

یوم خواتین پر کچھ اشعار

ازقلم: سرفراز بزمی ہے موت زمانے کے لئے مرگ امومتاس راز سے واقف نہیں افرنگ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔