دہلی: تحریک فروغ اسلام کے چار اہم ذمہ داران کو پولیس نے کیا ڈیٹین، لیکن بعد میں بانی تحریک کو چھوڑا

دہلی: 23 اگست، ہماری آواز(پریس ریلیز)

جنتر منتر پر فرقہ پرست طاقتوں کے ذریعہ گزشتہ 8 اگست کو اللہ و رسول اور مذہب اسلام و مسلمین کی شان میں ہوئی بھدی گستاخیوں کے پیش نظر فوری کارروائی کے مطالبہ میں ملک کی سرگرم عمل تنظیم تحریک فروغ اسلام نے تمام مسلمانوں کو یکجا کر اسی مقام (جنتر منتر) پر احتجاجی مظاہرہ کا اعلان کیا تھا، جس کے مطابق آج یعنی 24 اگست کو جنتر منتر پر ملک کے گوشہ گوشہ سے مسلم افراد پہنچ کر احتجاجی مظاہرہ میں شریک ہونے والے ہیں۔ مگر اس سے قبل کل شام کو تحریک کے بانی حضرت قمر غنی عثمانی صاحب سمیت 4 اہم ذمہ داران کو پولیس نے ڈیٹین کرلیا۔ واضح ہو کہ بانی تحریک کے علاوہ تحریک کے لیگل ہیڈ احسان الحق رضوی، مولانا شمس الہدی رضوی، نعمان شیخ رضوی کو تحریک کے آفس سے نزدیکی ویلکم پولیس اسٹیشن کبیر نگر لے جایا گیا تھا، جہاں کیا بات ہوئی واضح نہیں ہوسکا مگر کچھ وقت بعد بانی تحریک کو چھوڑ دیا گیا جس کے بعد تحریک کے دفتر میں پولیس اہل کاران اور بانی تحریک کے درمیان زبانی کشیدگی بھی دیکھنے کو ملی۔

ویڈیو میں دیکھیں کس طرح پولیس اہل کار پر بھڑک اٹھے بانی تحریک

تاہم تحریک کے قومی نائب صدر مولانا آصف رضا برکاتی نے ملک کے مسلمانوں سے اپیل کرتے ہوئے کہا ہے کہ "کل کا پروٹیسٹ ضرور ہوگا جو لوگ جہاں جہاں سے بھی آرہے ہیں وہ آئیں ان شاء اللہ پروٹیسٹ لیڈران بی ٹیم ضرور اپنے وقت پر پہنچے گے۔”

About ہماری آواز

Check Also

جمعیت علمائے اہلسنت ممبئی کے جنرل سکریٹری نباض ملت حضرت علامہ محمد عمر نظامی صاحب قبلہ کی دارالعلوم اہلسنت ضیاء النبی رفیع نگر گوونڈی میں آمد

علماء اہلسنت گوونڈی سے قومی ملی مذہبی رفاہی فلاحی امور پر تبادلہ خیال علاقہ سبربن …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے