نظم

شب جمعہ کی برکتیں

محمد اشرفؔ رضا قادری
مدیر اعلی سہ ماہی امین شریعت

بھیجتا خود ہے کردگار درود
ہے فرشتوں کا بھی شعار درود
دل کو کرتا ہے تابدار درود

ذاتِ والا پہ بار بار درود
بار بار اور بے شمار دردود

پیش کرتے ہیں جاں نثار سلام
بے شمار اور بار بار سلام
ذاتِ احمد پہ ہو ہزار سلام

روئے انور پہ نور بار سلام
زلفِ اطہر پہ مشک بار درود

پیش کرتی ہے خود بہار سلام
وادی و دشت و ریگ زار سلام
اِک حسیں اور یاد گار سلام

سر سے پا تک کرور بار سلام
اور سراپا پہ بے شمار درود

کرتے رہتے ہیں صبح و شام فدا
جان سرکار کے غلام فدا
نغمہ و لہجہ و کلام فدا

دل کے ہمراہ ہوں سلام فدا
جان کے ساتھ ہو نثار درود

اجر و بخشش کا گُل کِھلاتی ہے
گوشۂ گور جگمگاتی ہے
وحشت و تیرگی مٹاتی ہے

قبر میں خوب کام آتی ہے
بے کسوں کی ہے یارِ غار درود

گِر نہ اشرفؔ وجود اپنا سنبھال
پیش کر اُن پہ اپنا مال و منال
چھوڑ دنیا کے سارے رنج و ملال

اے حسنؔ خارِ غم کو دل سے نکال
غمزدوں کی ہے غم گسار درود

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے