انتقال و تعزیت منقبت

آنکھ ہےگِریاں ترے لیے

حضرت مفتی نظام الدین نوری نوراللہ مرقدہ کی یاد میں تڑپتے ہوئے دل کی آواز …

تو چل دیا تو آنکھ ہے گِریاں ترے لیے
مضطرہےدل اے نورئ ذیشاں ترے لیے

سرمایۂ ہنر کے امیں ، اے نظامِ دیں
غم گین ہے ادب کا دبستاں ترے لیے

ایسا الم ہے گلشنِ فیض الرسول کو
ہیں سارے گل تپیدہ و سوزاں ترے لیے

آدھے فلک پہ ڈوبا اچانک ترا ہلال
مُضطر ہے چرخ ، اے مہ تاباں ترے لیے

فیضِ نگاہِ نوری و اختر کے اے گہر
روشن ہوئے خزینۂ عرفاں ترے لیے

فکر رضا کے ناشر و بے باک ترجماں
دائم دفاعِ حق رہا عنواں ترے لیے

ضربِ کلیم تھی تری تقریر کی دھمک
صد آفریں ! اے غازئِ میداں ترے لیے

اخلاق اور علم کا سنگم تھی تیری ذات
کیوں کر بہیں نہ اشکِ فَراواں ترے لیے

اعلٰی تری خطابت و تدریس و شاعری
افسردہ ہیں تمام سُخن داں ترے لیے

اب بھی یقیں نہیں ہے تری موت کا ہمیں
کھولے ہوئے ہیں دید کے ایواں ! ترے لیے

جانے کدھر سے وصل کی تنویر مسکراے
ہرسو نظر ہے جلوۂ جاناں ! ترے لیے

اے جانے والے ! دیکھ پلٹ کر پھر ایک بار
ہر سمت ہیں چراغ ، درخشاں ترے لیے

اب بھی وہی ہجوم ، وہی دھوم ہے مگر
ہے ساری بزم ، اشک بَداماں ترے لیے

تربت پہ، التجاے فریدی کے گل ہیں پیش
باغِ جناں عطا کرے یزداں ترے لیے

ازقلم: سلمان رضا فرؔیدی صدیقی مصباحی
مسقط عمان
0096899633908

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے